ربیع الاول

ربیع الاول

کاٸنات میں دو ہستیاں ایسی ہیں جن کو ہم کسی بھی تاریخ کے احاطے میں نہیں لا سکتے وہ ہستیاں ہماری تعریف سے بہت بالاتر ہیں ایک اللہ اور دوسرے رسولﷺ،آپ ﷺ مکمل صفات کے مالک تھے آپ کی ہر ادا نرالی تھی ہر کام ہر سانس اللہ کے حکم کے مطابق لیتے تھے۔آپﷺ کی آمد بھی کمال تھی آپﷺ کا جانا بھی کمال تھا آپﷺ کی ولادت تمام کائنات کے لیے خوشی کا باعث تھے رحمت بنا کے ہمارے بنی ﷺ کو تمام کاٸنات کے لیے بنا کے بھیجا آپﷺ کی پیداٸش عام بچوں کی طرح نہیں تھی۔بچے پیدا ہوتے ہیں تو اپنے ساتھ گندگی لا کے پیدا ہوتے ہیں لیکن جب ہمارے نبی ﷺ کی ولادت ہوٸی تو خوشبو پھیل گٸی طہارت،خوشبو۔سبحان الله بچہ جب پیدا ہوتا ہے تو اس کی ناف آنت سے ملی ہوتی ہے اس کو باہر کاٹتے ہیں، لیکن جب ہمار ے نبیﷺ پیدا ہوۓ تو ناف کٹی ہوٸی تھی باہر نہیں کاٹا گیا۔بچے کا ختنہ کیا جاتا ھےلیکن ہمارے نبیﷺ ماں کے پیٹ سے ختنے کے ساتھ پیدا ہوۓ۔پاک ،صاف پاکیزہ پیدا ہوۓ خوشبو دار پیدا ہوۓ۔ داٸی شفإ حیران ہیں یہ کیسا بچہ ہے۔انہوں نے کہا آمنہ تیرا کیسا بچہ ہے؟ پاک خوبصورت۔آپﷺ کو آپؓ کے ساتھ لٹایا تو ہمارے نبیﷺ نے کروٹ بدلی ہاتھ رکھے اور سجدے میں چلے گۓ ایک لمبا سجدہ کیا پندرہ منٹ کا اور ہم سب کودکسایا کہ میں نماز لے کے آیا ہوں نماز نہ ھوڑنا۔
پھر سر اٹھایا سینہ اٹھایا ہاتھ کا سہارا لیا اور دوسرا ہاتھا اٹھایا آسمان کی طرف شہادت کی انگلی کی سارے کمرے میں نور ہی نور پھیل گیا ماں پر یشان ہے بچے کو گود میں لے لیا ۔کمرے کا چھت پھٹا ایک بادل کا ٹکڑا اندر آیا دھند ہی دھند چھا گٸی جیسے سردیوں میں ہوتا ہے کچھ نظر نہیں آتا ایسے ہی بچہ نظر نہیں آ رہا ایک آواز آٸی ترجمہ: اس بچے کو مشرق مغرب پھرا دو کل کاٸنات پھرا کے بتا دو جو ان کے پیچھے چلے گا اسے راستہ ملے گا منزل ملے گی جنت تک جاۓ گا ورنہ بھٹک کے ہلاک ہو جاۓ گا۔اسے آدم کے اخلاق دو شیث کی معرفت دو نوح کی شجاعت دو ابراہیم کی دوستی دو اسماعیل کی قربانی دو لوط کی حکمت دو صالح کی فصاحت دو اسحاق کی رضا دو یعقوب کی بشارت دو یوسف کا حسن و جمال دو موسی کا جاہ و جلال دو دانیال کی محبت الیاس کا وقار دو داود کی زبان فصاحت دو ایوب کا صابر دل دو یونس کی اطاعت دو یحی کی پاکدامنی دو عیسی کا زہد دو ۔تمام انبیإ علیہ اسلام کو جو ملا وہ سب کا سب اس بچے کو دو تمام انبیإ کی خصوصیات ملیں اور تریسٹھ سال کی عمر ملی تا کہ لوگوں کو ایک اطاعت گزار زندگی کا سبق سکھا کے جاٸیں اور اپنے نبی کا فرض ادا کر کے اپنی امت کو بھی امر بلمعروف و نہی عن المنکر کا حکم دے گۓ۔ ہمارے نبی ﷺ کی مثل نہ ملی ہے نہ قیامت تک ملے گی ۔

Comments (2)


  1. SUBHANALLAH

leave your comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Mobile Apps
Mobile Apps
Top